• +92-331-21-71888
  • gcuwriters@gmail.com
  • Government College University, Lahore
Literature
تلاش

تلاش


رات کا پچھلا پہر نہ جانے کتنے راز اپنے اندر سمیٹے ہوئے  ہے  ۔ اس عالمِ سکوت میں کھلے آسمان تلے وہ ایک  آئینہ ہی ہے جو کتنی ان کہی داستانوں کو ٹھکانہ دیے ہوئے ہے ۔ بھیڑ میں اپنے آپ کو صرف تنہائی کا ساتھی پاتے ہوئے اس آئینے میں جنم لیتی کرچیاں اب اپنے مکینوں کو دلاسہ دے رہی ہیں کہ یہ پہر اب تم خانہ بدوشوں کا مسکن ہوگا جو تمہیں اس خانہ بدوشی سے نجات دلائے گا ۔۔وہ آئینہ جو  ان جنم لیتی کرچیوں کا واحد مسکن ہے اس دلاسے پر ہنس رہا ہے

کہ خانہ بدوشی کا خاتمہ ہوگا!۔۔۔۔۔۔جنہیں آج تک کوئی مستقل مسکن نہ مل سکا انہیں یہ ٹھکرایا ہوا پہر کیا دے گا ؟ جو خود ان رازوں کو لئے آج اس نہج پر پہنچ چکا ہے کہ اب کوئی صدا بھی اسے سنائی نہیں دیتی اور رد کیے جانے کا احساس اس کی سیاہی میں نئے رنگوں کو جنم دے رہا ہے وہ ابھرتے رنگ جو اس پہر کا مسکن چھین رہے ہیں۔ یہ پہر جو خود خانہ بدوشی کی دلدل میں پسنےکر تیار  ہے کیسے ان داستانوں اور دفن ہوئے رازوں کی خانہ بدوشی کا خاتمہ کرے گا ؟۔۔۔۔۔۔

پہر ،آئینہ اور کرچیاں جو اپنے مکینوں کا کل دیکھ رہے ہیں اپنے آج سے نہ آشنا ہیں کہ اس آنے والے کل میں ان کی خود کی ذاتصفحہِ ہستی میں کہیں نظر نہیں اتی ۔۔۔ان خانہ بدوشوں کا کیا ہے ۔۔یہ تو ازل سے اسی راہ کے مسافر ہیں کہ جہاں محفوظ ٹھکانہملے کچھ دیر کے لئے وہی پراؤ ڈال لیا مگر آج تک کسی نے ان خانہ بدوشوں سے یہ نہیں پوچھا کہ ہر ٹھکانہ ان کا مسکن بنتے ہیکیوں اپنی ہستی سے ہاتھ دو بیٹھتا ہے ؟۔۔۔ نہ ہی ان خانہ بدوشوں پر کبھی کسی نے توجہ دی کہ یہ کیوں در در کی ٹھوکریں کھاتےپھرتے ہیں۔۔۔ایسا کیا ہے ان میں جو ہر چیز اپنے ساتھ بہا لئے جاتا ہے ۔۔

نہ جانے کتنے در کتنے مکیں ان خانہ بدوشوں کی بھینٹ چڑھ گئے۔۔۔نہ جانے کب ان خانہ بدوشوں کو اپنا مسکن ملے گا کہ جہاں اسپہر میں پھیلے سکوت کی طرح سکون کے ڈیرے ہونگے اور پھر انہیں کہیں بھی کسی در کی تلاش میں نہیں بھٹکنا پرے گا۔۔۔

                                                                   زید ارشد

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

four × five =